Parveen Shakir Poetry Chalne Ka Hausla Nahi

Sadipoetry.com is sharing the Parveen Shakir Poetry Chalne Ka Hausla Nahi Ishq Ke Is Safar Ne To Mujh Ko Nidhal Kar Diya with you.

چلنے کا حوصلہ نہیں رکنا محال کر دیا
عشق کے اس سفر نے تو مجھ کو نڈھال کر دیا

اے مری گل زمیں تجھے چاہ تھی اک کتاب کی
اہل کتاب نے مگر کیا ترا حال کر دیا

ملتے ہوئے دلوں کے بیچ اور تھا فیصلہ کوئی
اس نے مگر بچھڑتے وقت اور سوال کر دی

اب کے ہوا کے ساتھ ہے دامن یار منتظر
بانوئے شب کے ہاتھ میں رکھنا سنبھال کر دیا

ممکنہ فیصلوں میں ایک ہجر کا فیصلہ بھی تھا
ہم نے تو ایک بات کی اس نے کمال کر دیا

میرے لبوں پہ مہر تھی پر میرے شیشہ رو نے تو
شہر کے شہر کو مرا واقف حال کر دیا

چہرہ و نام ایک ساتھ آج نہ یاد آ سکے
وقت نے کس شبیہ کو خواب و خیال کر دیا

مدتوں بعد اس نے آج مجھ سے کوئی گلہ کیا
منصب دلبری پہ کیا مجھ کو بحال کر دیا

Parveen Shakir Poetry

Chalne Ka Hausla Nahi Rukna Muhal Kar Diya
Ishq Ke Is Safar Ne To Mujh Ko Nidhal Kar Diya

Aye Mere Gul Zamin Tujhe Chaah The Ik Kitab Ky
Ahl-E-Kitab Ne Magar Kya Tera Haal Kar Diya

Milte Hue Dilon Ke Bech Aur Tha Faisla Koi
Us Ne Magar Bicharte Waqt Or Sawal Kar Diya

Ab Ke Hawa Ky Sath Hai Daman-E-Yar Muntazir
Banu-E-Shab Ke Hath Men Rakhna Sambhal Kar Diya

Mumkina Faislon Men Ek Hijr Ka Faisla Bhi Tha
Hum Ny To Ek Baat Ki Us Ne Kamal Kar Diya

Mere Labon Pe Mohr Thi Par Mere Shisha-Ru Ne To
Shahr Ke Shahr Ko Mira Waqif-E-Hal Kar Diya

Chehra-O-Naam Ek Sath Aaj Na Yaad Aa Sake
Waqt Ny Kis Shabih Ko Khwab O Khayal Kar Diya

Muddaton Ba.Ad Us Ne Aaj Mujh Se Koi Gila Kiya
Mansab-E-Dilbari Pe Kya Mujh Ko Bahal Kar Diya

If you like our poetry collections than share it with your friends, Family and also share it on Facebook.

Leave a Comment

Exit mobile version