Wahshaten Kaisi Hain Khwabon Sy Obaidullah Aleem Ghazal

Sad Poetry In Urdu is sharing Wahshaten Kaisi Hain Khwabon Sy Obaidullah Aleem Ghazal with you. This is Sad Ghazal of Obaidullah Aleem very famous poet.

وحشتیں کیسی ہیں خوابوں سے الجھتا کیا ہے
ایک دنیا ہے اکیلی تو ہی تنہا کیا ہے

داد دے ظرف سماعت تو کرم ہے ورنہ
تشنگی ہے مری آواز کی نغمہ کیا ہے

بولتا ہے کوئی ہر آن لہو میں میرے
پر دکھائی نہیں دیتا یہ تماشا کیا ہے

جس تمنا میں گزرتی ہے جوانی میری
میں نے اب تک نہیں جانا وہ تمنا کیا ہے

یہ مری روح کا احساس ہے آنکھیں کیا ہیں
یہ مری ذات کا آئینہ ہے چہرہ کیا ہے

کاش دیکھو کبھی ٹوٹے ہوئے آئینوں کو
دل شکستہ ہو تو پھر اپنا پرایا کیا ہے

زندگی کی اے کڑی دھوپ بچا لے مجھ کو
پیچھے پیچھے یہ مرے موت کا سایہ کیا ہے

عبید اللہ علیم


Wahshaten Kaisi Hain Khwabon Sy Obaidullah Aleem Ghazal

Wahshaten kaisi hain khwabon sy ulajhta kya hai
Ek duniya hai akeli tu hi tanha kya hai

Daad de zarf-e-samaat to karam hai warna
tishnagi hai meri aawaz ki naghma kya hai

Bolta hai koi har-an lahu Mein mere 
Par dekhye nahi deta yeh Tamasha Kya Hai

Jis Tamanna Mein Guzarti Hai Jawani Meri
Main Ne Ab Tak Nahin Jaana Wo Tamanna Kya Hai

Ye Meri Ruh Ka Ehsas Hai Aankhen Kya Hain
Ye Meri Zat Ka Aaina Hai Chehra Kya Hai

Kash Dekho Kabhi Totte Huwe Aainon Ko
Dil Shikasta Ho To Phir apna paraya kya hai

Zindagi ki ai kadi dhup bacha le mujh ko
Pechhe pechhe ye mere maut ka saya kya hai

If you like our Wahshaten Kaisi Hain Khwabon Sy Obaidullah Aleem Ghazal then share it with your friends and family and also with your Sad Bestfriend also share it on Facebook.

Thanks for Reading Wahshaten Kaisi Hain Khwabon Sy Obaidullah Aleem Ghazal.

Leave a Comment

Exit mobile version