Yeh jo main bhagta hun waqt se aagy aagy Abbas Tabish Poetry
Yeh jo main bhagta hun waqt se aagy aagy Abbas Tabish Poetry

اب پرندوں کی یہاں نقل مکانی کم ہے
ہم ہیں جس جھیل پہ اس جھیل میں پانی کم ہے

یہ جو میں بھاگتا ہوں وقت سے آگے آگے
میری وحشت کے مطابق یہ روانی کم ہے

دے مجھے انجم و مہتاب سے آگے کی خبر
مجھ سے فانی کے لئے عالم فانی کم ہے

غم کی تلخی مجھے نشہ نہیں ہونے دیتی
یہ غلط ہے کہ تری چیز پرانی کم ہے

غیب کے باغ کا وہ بھید کھلا ہے مجھ پر
جس کا ابلاغ پرندوں کی زبانی کم ہے

ہجر کو حوصلہ اور وصل کو فرصت درکار
اک محبت کے لئے ایک جوانی کم ہے

اتنا مشکل تو نہ تھا گمشدگاں کا ملنا
ہم نے اے دشت تری خاک ہی چھانی کم ہے

اس سمے موت کی خوشبو کے مقابل تابشؔ
کسی آنگن میں کھلی رات کی رانی کم ہے

عباس تابش

Yeh jo main bhagta hun waqt se aagy aagy Abbas Tabish Poetry

Ab parindon ki yahan naql-e-makani kam hai
Hum hain jis jhil pe us jhil mein pani kam hai

Yeh jo main bhagta hun waqt sy aage aage
Meri wahshat ke mutabiq ye rawani kam hai

Dy mujhe anjum-o-mahtab se aage ki khabar
Mujh se fani ke liye aalam-e-fani kam hai

Gham ki talkhi mujhe nashsha nahin hone deti
Yeh ghalat hai ki teri chiz purani kam hai

Ghaib ke bagh ka wo bhed khula hai mujh par
Jis ka iblagh parindon ki zabani kam hai

Hijr ko hausla aur wasl ko fursat darkar
Ek mohabbat ke liye ek jawani kam hai

Itna mushkil to na tha gum-shudagan ka milna
Hum ne ai dasht teri khak hi chhani kam hai

Is samay maut ki khushbu ke muqabil ‘tabish’
Kese aangan mein khili raat-ki-rani kam hai

Tabish Abbas

Leave A Reply

Please enter your comment!
Please enter your name here