May 30, 2024
Chicago 12, Melborne City, USA
2 Lines Poetry

Parveen Shakir Poetry – Urdu

“Vo To Khushboo Hai, Hawaon Main Bikhar Jayega
Masla To Phool Ka Hai, Phool Kidhar Jayega”

Parveen Shakir the famous Pakistani Poet wrote multiple heart-touching ghazals and poured her pain of life into them

She was born in 1952 and died in 1994 at the young age of 42 due to her car accident.

It was a great loss to Urdu Poetry.

In her time, she was one of the most famous female Urdu poets and showed a unique style of writing through her writing.

In this post, SadiPoetry.com’s team is sharing with you the beautiful collection of Urdu Poetry by one of the most celebrated Urdu Poets of Pakistan Parveen Shakir.

So, let’s start reading this gorgeous post.

زندگی میں یہ ہنر بھی آزمانا چاہیے
zindagi main bhi ye hunar azmana chaiye
جنگ کسی اپنے سے ہو تو ہار جانا چاہیے
jang kisi apny say ho tu haar jana chahiye
دل کا کیا ہے وہ تو چاہے گا مسلسل ملنا
dil ka kiya ha wo tu chahy ga musalsil milna
وہ ستم گر بھی مگر سوچے کسی پل ملنا
vo sitamgar bhi magar sochy kisi pal milna
یہ کب کہتی ہوں تم میرے گلے کا ہار ہو جاو
ye kab kehti hoon tum mery galy ka haar ho jao
وہیں سے لوٹ جانا تم جہاں بیزار ہو جاو
wahin se laut jana tum jahan bezar ho jao
وہ تو خوشبو ہے ہواوں میں بکھر جائے گا
wo tu khushboo ha hawaon main bikhar jay ga
مسئلہ پھول کا ہے پھول کدھر جائے گا
masla phool ka hay phool kidhar jay ga
میں پھول چنتی رہی اور مجھے خبر نہ ہوئی
main phool chunti rahi aur mujhy khabar na hui
وہ شخص آ کے مرے شہر سے چلا بھی گیا
wo shakhs aa kay mery shehr say chala bhi giya
اک نام کیا لکھاترا ساحل کی ریت پر
ik name kiya likha tera sahil ki rait per
پھر عمر بھرہوا سے میری دشمنی رہی
phir umer bhar hawa say meri dushmani rahi
وہ اپنی ایک ذات میں کُل کائنات تھا
wo apni aik zaat main kul kainat tha
دنیا کے ہر فریب سے ملوا دیا مجھے
duniya kay har faraib say milwa diya mujhay
موسم کا  عذاب چل رہا ہے 
mausam ka azab chal raha hay
بارش میں گلاب جل رہا ہے
barish main gulab jal raha hay
لڑکیوں کے دکھ عجب ہوتے ہیں سکھ اِس سے عجب
larkiyon ke dukh ajab hote hain sukh is se ajab
ہنس رہی ہیں اور کاجل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ
hans rahi han aur kajal bheegta ha sath sath
تلاش کر میری کمی کو اپنے دل میں
talash kar meri kami ko apnay dil main
درد ہو تو سمجھ لینا ، رشتہ اب بھی باقی ہے
dard ho tu samajh lena— rishta ab bhi baqi hay
جب سے پرواز کے شریک ملے
گھر بنانے کی آرزو ہے بہت
jab say parwaz kay sharik milay
ghar banany ki aarzo hay buhat
تعلقات کے برزخ میں ہی رکھا مجھ کو
وہ میرے حق میں نہ تھا اور خلاف بھی نہ تھا
tualkat key barzikh main hi rakha mujh ko
vo mary hak main na tha aur khilaf bhi na tha
کتنی معصوم خواہش ہے اس دیوانی لڑکی کی
چاہتی ہے محبت بھی کرے اور خوش بھی رہے
kitni masoom hwahish hay iss dewani larki ki
chahati hay muhabbat bhi kary aur khush bhi rahay
میں اپنی دوستی کو شہر میں رسوا نہیں کرتی
محبت میں بھی کرتی ہوں مگر چرچا نہیں کرتی
main apni dosti ko shehr main ruswa nahi karti
muhabbat main bhi karti hoon magar charcha nahi karti
میری طلب تھا اک شخص، وہ جو نہیں ملا تو پھر
ہاتھ دعا سے یوں گرا، بھول گیا سوال بھی
meri talab tha ik shakhs wo jo mahi mila tu phir
haath dua say youn gira bhool giya sawal bhi
تھک گیا ہے دلِ وحشی میرا فریاد سے بھی
جی بہلتا نہیں اے دوست تیری یاد سے بھی
thak gia hay dil e vehshi mera faryad say bhi
jee behalta nahi aye dost teri yaad say bhi
جو بادلوں سے بھی مجھ کو چھپائے رکھتا تھا
بڑھی ہے دھوپ تو بے سائبان چھوڑ گیا
jo badalon say bhi mujh ko chupaye rakhta tha
barrhi hay dhoop tu bay saiban chorr giya
یاد کر کے مجھے نم ہو گئی ہوں گی پلکیں
آنکھ میں پڑ گیا کچھ کہہ کر یہ ٹالا ہو گا
yaad kar kay mujhay nam ho gai hoon gi palkain
aank main parr gia kuch — keh kay yeh tala ho ga
کل رات جو ایندھن کے لئے کَٹ کے گِرا ہے
چڑیوں کو بہت پیار تھا اس بُوڑھے شجر سے
kaal raat jo endhan kay liye kat kay gira hai
chirriyun ko buhat piyar tha uss bhorray shajar say
سَب سے نظر بچا کے وہ مُجھ کو کُچھ ایسے دیکھتا
ایک دفعہ تو رُک گئی، گردش ماہ و سال بھی
sab say nazar bacha kay wo mujh ko kuch aisay dekhta
aik dafa tu ruk gai gardish mah-o-saal bhi
اِس دِل میں شوقِ دید زیادہ ہی ہو گیا
اُس آنکھ میں میرے لئے اَنکار جب سے ہے
iss dil main shauq e deed ziyada hi ho giya
us ankh main meray liye inkar jab say hai
حُسن کے سمجھنے کو عُمر چاہیے جاناں
دو گھڑی کی چاہت میں لڑکیاں نہیں کھلتیں
husn kay samajhnay ko umer chahiye janan
do gharri ki chahat main larrkiyan nahi khiltin
اب تو اس راہ سے وہ شخص گزرتا بھی نہیں
اب کس اُمید پہ دروازے سے جھانکے کوئی
ab tu iss rah say wo shakhs guzarta bhi nahi
ab kis umeed pay derwazy say jhanky koi
بس یہ ہُوا کہ اس نے تکلیف سے بات کی
اور ہم نے روتے روتے دوپٹے بھگو لئے
bas yeh huwa keh us nay takleef say baat ki
aur ham nay rotay rotay dupatay bhigo liye
دروازہ جو کھولا تو نظر آئے کھڑے وہ
حیرت ہے مُجھے آج کِدھر بھول پڑے وہ
darwaza jo khola tu nazar aye kharry wo
hairat hai mujhy aaj kidhar bhool parry wo
شب کی تنہاٸ میں اب تو کثر
گٌفتگو تٌجھ سے رہا کرتی ہے
shab ki tanhai main ab tu aksar
guftgu tujh say raha karti hai
یہ دنیا ایک دھوکا ہے
یہاں اپنوں کو ہی اپنا بنانے میں سالوں گزرجاتے ہیں
yeh dunia aik dohka hai
yahain appno ko hi appna bnany main salo gzr jaty hain

\

میں سچ کہوں گی مگر پھر بھی ہار جاٶں گی
وہ جھوٹ بولے گا اور لاجواب کر دے گا
main sach kahun gi magar phir bhi haar jaon gi
wo jhoot boly ga aur lajawab kar daay ga
وہ مٌجھ کو چھوڑ کے جس آدمی کے پاس گیا
برابری کا بھی ہوتا تو صبر آجاتا
wo mujh ko chorr kay jis aadmi kay pass giya
barabri ka bhi hota tu sabr aa jata
ظٌلم سہنا بھی تو ظالم کی حمایت ٹھہرا
خامشی بھی تو ہوٸ پٌشت پناہی کی طرح
zulm sehna bhi tu zalim ki hamayat tehra
kjamoshi bhi tu hui pusht panahi ki tarah
تو بدلتا ہے تو بے ساختہ میری آنکھیں
اپنے ہاتھوں کی لکیروں سے اٌلجھ جاتی ہیں
tu badalta hai tu bay sakhta meri aankhen
apny hathon ki lakeeron say ulajh jati hain
کٌچھ تو ہوا بھی سرد تھی کچھ تھا تیرا خیال بھی
دِل کو خوشی کے ساتھ ساتھ ہوتا رہا ملال بھی
kuch tu hawa bhi sard thi kuch tha tera khiyal bhi
dil ko khushi kay sath sath hota raha malal bhi

Conclusion

Praveen Shakir used to present a different and captivating view through her Poetries.

When you read her Urdu Poetries, you can feel her pain and struggle in life. She was a divorcee and had a son from her husband.

So, it would be tough for her to be emotionally strong.

Our team always tries to share the collection of the best Urdu poets with our readers on this platform.

This time we shared a beautiful Urdu Poetry collection of Parveen Shakir with you.

We hope you like this attempt. Do share this Urdu Shayari post with your friends and family who like to read Urdu Poetry.