July 23, 2024
Chicago 12, Melborne City, USA
Urdu Poetry

Ahmed Faraz Poetry in Urdu

“Mere Sabar Ki Inteha Kya Puchte Ho Faraz Wo Mujhse Lipat Kar Roya Kisi Or Ke Liye”

Ahmed Faraz is a famous Pakistani poet who rules people’s hearts even after his death.

He wrote many famous Urdu poetries related to multiple topics.

In this post, our team is sharing Urdu Poetry “Mere Sabar Ki Inteha Kya Puchte Ho” by Ahmed Faraz with our readers.

So, let’s start reading this beautiful Urdu Poetry.

میرے صبر کی انتہا کیا پو چھتے ہو فراز
meray sabar ki intiha kiya puchatay ho faraz

وہ مجھ سے لپٹ کے رویا کسی اور کے لیے
wo mujh say lipat kay roya kisi aur ka liye

چلا تھا ذکر زمانے کی بے وفائی کا
chala ṯha zikar zamany ki bewafai ka
سو آ گیا ہے تمہارا خیال ویسے ہی
so aa gia hay tumhara khiyal wasy hi
دل کو تیری چاہت یہ بھروسہ بھی بہت ہے
dil ko teri chahat pay bharosa bhi buhat hay
اور تجھ سے بچھڑ جانے کا ڈر بھی نہیں جاتا
aur tujh say bichade jane ka dar bhi nahi jata
اس کی آنکھوں کو کبھی غور سے دیکھا ہے فراز
رونے والوں کی طرح جاگنے والوں جیسی
iss ki aankhon ko kabhi ghor say dekha hay faraz
rony walon ki ṯarah jagny walon jesi
کون کس کے ساتھ کتنا مخلص ہے فراز
وقت ہر شخص کی اوقات بتا دیتا ہے
kon kis kay sath kitna mukhlas ha faraz
waqt har shahks ki auqat bata deta hay
میں آنے والے زمانوں سے ڈر رہا ہوں فراز
کہ میں نے دیکھی ہیں آنکھیں اُداس لوگوں کی
main aany waly zamano say dar raha hoon faraz
kay main nay dekhi han aankhain udas logon ki
میں وہاں ہوں جہاں جہاں تم ہو
تم کروگے کہاں کہاں سے گریز
main wahan hoon jahan jahan tum ho
tum karo gey kahan kahan say guraiz
تیرے ہوتے ہوئے آجاتی تھی ساری دنیا
آج تنہا ہوں توکوئی نہیں آنے والا
tery hoty huay aa jati thi sari duniya
aaj tanha hoon tu koi nahi aany wala
تو اپنی شیشہ گری کا ہنر نہ کر ضا ئع
میں آئنیہ ہوں مجھے ٹوٹنے کی عادت ہے
tu apni sheesha gari ka hunar na kar zaya
main aaina hoon mujhy tootny ki aadat hay
تو سامنے ہے تو پھر کیوں یقین نہیں آتا
یہ بار بار جو آنکھوں کو مل کے دیکھتے ہیں
tu samny hay tu phir kiyun yaqeen nahi aata
yeh bar bar jo aankon ko mal kay dethty han
کچھ تو مرے پندارِمحبت کا بھرم رکھ
تُو بھی تو کبھی مجھ کو منانے کے لیے آ
kuch tu mery pindar e muhabbat ka bharam rakh
tu bhi tu kabhi mujh ko manany ka liye aa
آنکھ سے دور نہ ہو دل سے اتر جائے گا
وقت کا کیا ہے گزرتا ہے گزر جائے گا
aankh say dur na ho dil say utar jaye ga
waqt ka kiya hay guzarta hay guzar jaye ga
زندگی سے یہی گِلہ ہے مُجھے
تو بہت دیر سے ملا ہے مجھے
zindagi say yahi gila hay mujhy
tu buhat dair say mila hay mijhy
ایسی تاریکیاں آنکھوں میں بسی ہیں فراز
رات تو رات ہے، ہم دن کو جلاتے ہیں چراغ
aisi tareekiyan aankhon main basi haan faraz
raat tu raat hay ham din ko jalaty haan charagh
دوست بن کر بی نہیں ساتھ نبھانے والا
وہی انداز ہے ظالم کا زمانے والا۔
dost ban kar bhi nahi sath nibhany wala
wahi andaz hay zalim ka zamany wala
سنا ہے اس کے بدن کی تراش ایسی ہے
کہ پھول اپنی قبائیں کتر کے دیکھتے ہیں
suna hay uss kay badan ki tarash aaisi hay
kay phool apni qabain kutar kay dekhty han
خود کو ترے معیار سے گھٹ کر نہیں دیکھا
جو چھوڑ گیا اُس کو پلٹ کر نہیں دیکھا
khud ko teray mayar say ghat kar nahi dekha
jo chorr gia us ko palat kar nahi dekha
ہُوا ہے تُجھ سے بچھڑنے کے بعد یہ معلوم
کہ تو نہیں تھا، تیرے ساتھ ایک دنیا تھی
huwa hay tujh say bicharrny kay baad yeh maloom
kay tu nahi tha tery sath aik dunya thi
ہزار بار مرنا چاہا ، نِگاہوں میں ڈوب کر ہم نے فرازؔ
وہ نِگاہیں جُھکا لیتی ہے، ہمیں مرنے نہیں دیتی
Hazar baar marna chaha nigahon main doob kar ham nay faraz
Wo nigahain jhuka leti hay, hamain marnay nahi deti
کیوں گِلہ ہم سے ہو کِسی کو فرازؔ
ہم تو اپنے بھی ہو نہیں پائے
kiyun gila ham say ho kisi ko faraz
ham tu apnay bhi ho nahi paye
ہم نہ ہوں گے تو کِسی اور کے چرچے ہوں گے
خلقتِ شہر تو کہنے کو فسانے مانگے
ham na hoon gaay tu kisi aur kay chrchay hoon gaay
khaqat e shehar tu kehnay ko fasanay mangay
پیام آئے ہیں اُس یارِ بے وفا کے مُجھے
جِسے قرار نہ آیا کہیں بھُلا کے مُجھے
piyam aaye haan us yaar e bewafa kay mujhay
jisay qarar na aya kahin bhula kay mujhay
نہ میرے زخم کھُلے ہیں نہ تیرا رنگِ حِنا
اَب کے موسم ہی نہیں آئے گُلابوں والے
na mery zakham khulay haan na tera rang e hina
ab kay mausam hi nahi aaye gulabon walay
کس کس کو بتائیں گے جُدائی کا سبب ہم
تو مُجھ سے خفا ہے تو زمانے کے لئے آ
kis kis ko batain gain judai ka sabab ham
tu mujh say khafa hai tu zamanay ka liye aa
اُسے ہم یاد آتے ہیں فقط فُرصت کے لمحوں میں
مگر یہ بات بھی سچ ہے اُسے فُرصت نہیں مِلتی
usay haam yaad aatay hain faqt fursat kay lamhon main
magar ye baat bhi sach hai usay fursat nahi milti
بے رُخی تو نے بھی کی ہے ، عُذرِزمانہ کر کے
ہم بھی محفل سے اُٹھ آئے ہیں بہانہ کر کے
bay-rukhi tu nay bhi ki hai uzar-e-zamana kar kay
ham bhi mehfil say uth aaye hain bahana kar kay
اب اور کیا کسی سے مراسم بڑھائیں ہم
یہ بھی بہت ہے تجھ کو اگر بھول جائیں ہم
ab aur kiya kisi say marasam barrhain ham
ye bhi buhat hai tujh ko agar bhool jain haam
بندگی ہم نے چھوڑ دی ہے فراز
کیا کریں جب لوگ خُدا ہو جائیں
bandagi ham nay choor di hai faraz
kiya karain jab log khuda ho jain

Conclusion

“Mai Aane Wale Zamano Se Dar Rha Hoon Faraz Ke Maine Dekhi Hai Aankhe Udas Logo Ki”

This Urdu Shayari by Ahmed Faraz has a crux of betrayal and fear of facing lost love.

Ahmed Faraz beautifully moulds multiple emotions of love in this Urdu Poetry.

As you have completed reading this poetry, share your thoughts about this in the comment section. Our team would love to read all your genuine comments.

Also, you are requested to share this Urdu Poetry “Mere Sabar Ki Inteha Kya Puchte Ho” by Ahmed Faraz with your friends and family.

Furthermore, our readers can also download Shayari images by clicking the download button.

So, you can download the favourite part of this Urdu Poetry and save it in your phone’s gallery.