July 23, 2024
Chicago 12, Melborne City, USA
Urdu Poetry

Faiz Ahmed Faiz Poetry In Urdu

Faiz Ahmed Faiz was a Pakistani Poet who was one of the most influential Poets of his time.

Faiz Ahmed Faiz was born in 1911 and died in 1984. He started his writing career by writing romantic poems and Shayaris and later on started writing revolutionary Poetries.

He was one of the most influential Urdu Poets, his ideas are still relevant and influential in Pakistan and other parts of the world.

In this post, you will read Urdu Poetries written by Faiz Ahmed Faiz Shab.

So, let’s start reading this post and explore the creative world of Urdu Poetry.

دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے


دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے
وہ جا رہا ہے کوئی شب غم گزار کے
ویراں ہے مے کدہ خم و ساغر اداس ہیں
تم کیا گئے کہ روٹھ گئے دن بہار کے
اک فرصت گناہ ملی وہ بھی چار دن
دیکھے ہیں ہم نے حوصلے پروردگار کے
دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کر دیا
تجھ سے بھی دل فریب ہیں غم روزگار کے
بھولے سے مسکرا تو دیے تھے وہ آج فیضؔ
مت پوچھ ولولے دل ناکردہ کار کے

گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چل


گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے
چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے
قفس اداس ہے یارو صبا سے کچھ تو کہو
کہیں تو بہر خدا آج ذکر یار چلے
کبھی تو صبح ترے کنج لب سے ہو آغاز
کبھی تو شب سر کاکل سے مشکبار چلے
بڑا ہے درد کا رشتہ یہ دل غریب سہی
تمہارے نام پہ آئیں گے غم گسار چلے
جو ہم پہ گزری سو گزری مگر شب ہجراں
ہمارے اشک تری عاقبت سنوار چلے
حضور یار ہوئی دفتر جنوں کی طلب
گرہ میں لے کے گریباں کا تار تار چلے
مقام فیضؔ کوئی راہ میں جچا ہی نہیں
جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے

آئے کچھ ابر کچھ شراب آئ

آئے کچھ ابر کچھ شراب آئے
اس کے بعد آئے جو عذاب آئے
بام مینا سے ماہتاب اترے
دست ساقی میں آفتاب آئے
ہر رگ خوں میں پھر چراغاں ہو
سامنے پھر وہ بے نقاب آئے
عمر کے ہر ورق پہ دل کی نظر
تیری مہر و وفا کے باب آئے
کر رہا تھا غم جہاں کا حساب
آج تم یاد بے حساب آئے
نہ گئی تیرے غم کی سرداری
دل میں یوں روز انقلاب آئے
جل اٹھے بزم غیر کے در و بام
جب بھی ہم خانماں خراب آئے
اس طرح اپنی خامشی گونجی
گویا ہر سمت سے جواب آئے
فیضؔ تھی راہ سر بسر منزل
ہم جہاں پہنچے کامیاب آئے

ہم پر تمہاری چاہ کا الزام ہی تو ہے


ہم پر تمہاری چاہ کا الزام ہی تو ہے
دشنام تو نہیں ہے یہ اکرام ہی تو ہے
کرتے ہیں جس پہ طعن کوئی جرم تو نہیں
شوق فضول و الفت ناکام ہی تو ہے
دل مدعی کے حرف ملامت سے شاد ہے
اے جان جاں یہ حرف ترا نام ہی تو ہے
دل ناامید تو نہیں ناکام ہی تو ہے
لمبی ہے غم کی شام مگر شام ہی تو ہے
دست فلک میں گردش تقدیر تو نہیں
دست فلک میں گردش ایام ہی تو ہے
آخر تو ایک روز کرے گی نظر وفا

وہ یار خوش خصال سر بام ہی تو ہے
بھیگی ہے رات فیضؔ غزل ابتدا کرو
وقت سرود درد کا ہنگام ہی تو ہے

Conclusion

Faiz Ahmed Faiz Shab was one of the most celebrated Urdu Poets of his time. He wrote many influential Urdu Poetries. Faiz Ahmed Faiz also led the communist party and was in prison for four years because of political reasons.

He saw many turns in his life and became the first Asian Poet to receive the Lenin Peace Prize. It was awarded by the Soviet Union in 1982.

Before he died in 1984, He was also nominated for the Nobel Prize.

If you are someone who likes to read books then I recommend you read books on Faiz Ahmed Faiz.

For some people, it will be a completely different experience.

As the post is ending, you are requested to share feedback in the comment section about this post and also let us know your thoughts about Faiz Ahmed Faiz.