April 22, 2024
Chicago 12, Melborne City, USA
Sad Poetry

Ashfaq Ahmed Famous Urdu Quotes

Ashfaq Ahmed was a Pakistani Urdu Writer. He wrote many books in his life and became a famous writer.

He was born in 1925 and died in year 2004 at Lahore, Pakistan. Ashfaq Ahmed presented a perspective of life through his books.

If you are a person who likes to read books then I recommend you to read his books.

It will give you a different perspective of life and your thinking for the pursuit of happiness can be changed.

In this post, Sadipoetry.com presents more than 25 famous Urdu Quotes of Ashfaq Ahmed Shab which can provide you a better perspective toward life.

So, let’s read this amazing post of Urdu Quotes by Ashfaq Ahmed Shab.

جب انسان کا علم لاحاصل رہتا ہے تو وہ دریا کو چھوڑ کر سمندر کا پیاسا بن جاتا ہے۔ چھوٹے راستے سے ہٹ کر بڑے مدار کا مسافر بن جاتا ہے ۔ تب اس کی طلب اس کی ترجیحات بدل جاتی ہیں ۔
Jab insan ka ilm la hasi rehta hai tu woh darya ko chorh kar samandar ka pyasa ban jata hai… Chotey rastey sy hat kar barhey madar ka musafar ban jata ha, tab is ki talb, is ki tarjiyat badal jati hain.
ہماری نظر دوسروں کے چھوٹے چھوٹے عیبوں پر ہوتی ہے ۔ اپنے بڑے بڑے عیب دکھائی نہیں دیتے ، اپنے بدن پر سانپ بچھو لٹک رہے ہیں ان کی پراہ نہیں اور ہم دوسروں کی مکھیاں اڑانے کی فکر میں ہیں۔
Hamari nazar dosron k chotey chotey haibon par hoti hai… Apney barhey barhey aib dekhai nai dety, apney badan par saanp aur bichoo latak rahe hain un ki parwa ni aur ham dosron ki makhyan urhaney k fikar ma hain.
اپنی انا کو کسی کے سامنے پامال کر دینا مجازی عشق ہے اور اپنی انا کو بہت سوں کے آگے پامال کر دینا عشق حقیقی ہے۔ Apni anna ko kisi k saamney pamal kar dena majazi ishq hai aur apni anna ko buhat soon k agey pamal kar dena ishq e haqeeqi hai.
ہمارے ساتھ یہ بڑی بد قسمتی ہے کہ ہمیں بازاروں میں جانے کا وقت مل جاتا ہے ، تفریح کے لئے وقت مل جاتا ہے ، دوستوں سے بات کرنے کا وقت مل جاتا ہے، لیکن اپنے ساتھ بیٹھنے کا ، اپنے اندر جھانکنے کا کوئی وقت میسر نہیں آتا۔
Hamarey sath ye barhi badqismti hai k hamein bazaron ma janey ka waqt mil jata hai, tafreeh k lye waqt mil jata hai, doston sy bat karney ka waqt mil jata haj, lakin apney sath bethney ka, apney andar jhankney ka koi waqt mayassar nahi aata.
ہم میں سے ہر ایک دوسرے پر یہ ثابت کر نا چاہ رہا ہو تا ہے کہ میں تم سے زہانت کے اعلی درجے پر فائز ہوں اور زیادہ معلومات رکھتا ہوں اور تم تو بس ایسے ہی ہو اور تمہارا کوئی حال نہیں ہے۔
Ham ma sy har aik dosrey pr ye sabat karna chah raha hota hai k ma tum sy zahanat k ahla darjey par faiz hun aur zyada maloomat rakhta hun aur tum tu bas ayse hi hu aur tumara koi haal nahi hai.
انسان واحد ایسی مخلوق ہے جس کا زہر الفاظ میں ہوتا ہے۔
Insan wahid eysi makhlooq hai jis ka zehar alfaaz ma hota hai.
ضرورت سے زیادہ اچھے بنو گے تو ضرورت سے زیادہ استعمال کیے جاو گے۔ Zarorat sy zyada achey bno gy tu…. Zarorat sy zyada istamal kye jao gy.
پر ایک چیز اپنے وقت پر ہی اچھی لگتی ہے نیکی کمانے کا وقت جوانی ہے افسوسناک بات یہ ہے کہ ہم نیکی اس وقت کرتے ہیں جب برائی کے قابل نہیں رہتے۔
Har aik cheez apney waqt par hi achi lagti hai, neki kamaney ka waqt jawani hai afsoos naak bat ye hai k ham neki is waqt karty hain jab burai k qabil nahi rehty.
جب بول نہ پاؤ تو رب کے آگے رو لیا کرو وہ سب جانتا ہے۔
Jab bol na pao tu rab k agey roo lya karo woh sab janta hai.
لباس قیمتی ہو یا سستا گٹھیا کردار کو چپھا نہیں سکتا۔
Libaas qeemti hu ya sasta… Ghatya kirdaar ko chupa nahi sakta.
انسان ایسا غافل منصوبہ ساز ہے جو اپنی ساری پلاننگ میں کبھی اپنی موت کو شامل نہیں کرتا۔
Insaan eysa ghafil mansooba saz hai jo apni saari planning ma kabhi apni moot ko shamil nahi karta.
جب سورج غروب ہونے لگتا ہے تو چھوٹے آدمیوں کے سائے بھی بہت بڑے ہو جاتے ہیں۔
Jab sooraj gharoob honey lagta hai th chotey aadmion k saaye bhi buhat barhey hu jatey hain.
جب تم کسی میں کوئی عیب دیکھو تو اسے اپنے اندر تلاش کرو اگر اپنے اندر پالو تو اسے نکال دو یہ ہی حقیقی تبلیغ ہے۔
Jab tum kisi ma koi aib dekho tu ussey apney andar talash karo agar apney andar paa lo usey nikal do ye hi haqeeqi tableegh hai.
نزدیک سے آنے والی آوازوں میں سے سب سے قریب ترین آواز ضمیر کی ہوتی ہے لیکن کم ہی لوگوں کو سنائی دیتی ہے
Nazdeek sy aani wali awazon ma sab sy qareeb tareen awaz zameer ki hoti hai hai..lakin kam hi logon ko sunai deti hai.
سمجھوتے میں زبردستی کا عنصر ہوتا ہے مان لینے کی کیفیت نہیں ۔ سب کچھ جانتے ہوئے سمجھوتا کرنا کربناک ہوتا ہے مگر ماننے کے لیے جاننا ضروری نہیں۔
Samjhotey ma zabardasti ka ansar hota hai maan leney ki kaifiyat nahi…. Sab kuch janty huey samjhota karna karabnaak hota haj magar maanney k lye janna zarori nahi.
جب زندگی کے معاملات اڑ جائیں ، سمجھ جاؤ تم نے دوسروں کے معاملات اڑاۓ ہوئے ہیں آسانیاں دو آسانیاں ملیں گی۔
Jab zindgi k mamlaat urh jaein tu samajh jao tum ne dosron k mamlaat urhaye hue hain… Asaanian do asaanian milein gi.
انسان زندگی میں خدا کا گناہ کرے تو شوق سے کرے لیکن کسی بندے کا گناہ گار نہ ہو۔
Insaan zindgi ma khuda ka gunah karey tu shoq sy karey lakin kisi bandey ka gunah gar na hu.
زندگی وہ واحد پودا ہے جس کا بیج زمین کے اوپر لگتا ہے اور پھل زمین کے نیچے ملتا ہے۔
Zindgi wo wahid poda hai jis ka beej zameen k oper lgta hai ahr phal zameen k neechy milta hai.
مطمئن اور پر سکون زندگی وہی لوگ گزارتے ہیں جو امیدیں آسمان میں بسنے والے رب سے رکھتے ہیں۔
Mutmahin aur pur sakoon zindgi wohi loog guzarty hain jo umeedein aasman ma basney waley rab sy rakhty hain.
اگر لوگ اپنی گفتگو سے غیبت ، تہمت اور بہتان نکال دیں تو باقی صرف خاموشی رہ جاتی ہے ۔۔۔ جو اک بہترین عبادت ہے۔
Agr loog apni guftagoo sy gheebat, tuhmat aur buhtaan nekaal dein tu baaqi sirf khamoshi reh jati hai…. Jo aik behtareen ibadat hai.
پھل نہ درخت کی ڈال کو لگتا ہے نہ اس کے مضبوط تنے کو ، پھل جب بھی لگتا ہے لرزنے والی کمزور سی ، رکوع میں جھک جانے والی شاخ کو لگتا ہے۔
Phal na darakht ki daal ko lagta hai na is k mazboot tanney ko, phal jab bi lgta hai larazney wali kamzoor si, rakoh ma jhuk janey wali shaakh ko lgta hai.
عورت مردکی امیری اور غریبی سے بلکل متاثرنہیں ہوتی وہ تو بس اس بات سے متاثر ہو جاتی ہے کہ ایک انسان اس کو عزت دیتا ہے ۔ کچھ عورتیں صرف عزت چاہتی ہیں پیسہ نہیں
Aurat mard ki ameeri aur ghareebi sy bolkul mutasir ni hoti, woh tu bus is bat sy mutasir hu jati hai k aik insaan is ko izzat deta hai.. kuch aurtein sirf izzat chahti hain paisa ni.

Conclusion

“Hamari Nazar Dusro Ke Chote Chote Aiebo Par Hoti Hai
Apne Bade Bade Aieb Dikhai Nahi Dete
Apne Badan Par Sanp Bichu Latak Rahe Hai
Unn Ki Parwah Nahi Aur Ham Dusro Ki
Makhiyan Udane Ki Fikar Mai Hai”

Ashfaq Ahmed was a great Urdu Writer who gave us many inspiring books which provide learning about life and society.

There is no doubt that his writings are still relevant today.

This post was an attempt to share great Urdu Quotes by Ashfaq Ahmed.

We hope to like this post, so share this post with friends and family.